اسلام آباد، 15  اپریل (اے پی پی):احساس ایمرجنسی کیش پروگرام کے تحت مستحق افراد میں مالی امداد تقسیم کے عمل میں شفافیت کو یقینی بنانے کی غرض سے وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے سماجی تحفظ و تخفیف غربت ڈاکٹر ثانیہ نشتر نے بدھ کو یہاں

   G-10/4 اسلام آباد میں قائم ڈسٹری بیوشن سینٹر کا دورہ کیا۔ اس موقع پر  گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر ثانیہ نشتر کا کہنا تھا کہ پاکستان کی تاریخ میں مالی امداد کا اتنا تیز ترین اور شفاف پروگرام پہلے کبھی نہیں آیا۔گزشتہ 6 روز میں اب تک 2.73 ملین مستحق خاندانوں کو احساس ایمرجنسی کیش ریلیف کے تحت 32.87 بلین روپے تقسیم کئے جا چکے ہیں جبکہ پروگرام کے تحت ملک بھر میں  مجموعی طور پر ایک کروڑ بیس لاکھ مستحق خاندانوں میں مالی امداد تقسیم کی جائے گی۔

احساس ایمرجنسی کیش امداد کی تقسیم کا عمل رواں ماہ کے آخر تک جاری رہے گا جس کے لیے ملک بھر میں 17,000 سنٹرز قائم کئے جائیں گے جن میں سے 9,419 مراکز قائم کئے جا چکے ہیں۔
احساس ایمرجنسی کیش سنٹر ز میں مالی امداد وصول کرنے آنے والوں کے لئے کرونا سے بچاؤ کے خصوصی حفاظتی اقدامات کئے گے ہیں جن میں سنٹرز کو ڈس انفیکٹ کرنا، سماجی فاصلہ قائم رکھنا اور ہاتھوں کو سینیٹیز کرنا شامل ہیں۔

 احساس ایمرجنسی کیش سنٹر ز میں مالی امداد وصول کرنے آنے والے معذور افراد کی سہولت سے متعلق عملے کوخصوصی ہدایات جاری کی گئی ہیں۔احساس ایمرجنسی کیش میں رجسٹریشن کا طریقہ کار ایس ایم ایس سروس پر قائم کیا گیا ہے۔اب تک 78.44 ملین ایس ایم ایس وصول ہو چکے ہیں۔احساس ایمرجنسی کیش میں رجسٹریشن کے لئے ایس ایم ایس سروس 19 اپریل تک جاری رہے گی ۔

گزشتہ روز کابینہ نے اس پروگرام کے لیے برانچ لیس بینکنگ ایجنٹس کے کمیشن پر عائد 24 فیصد ایڈوانس ودہولڈنگ ٹیکس معاف کرنے کی منظوری  دے دی ہے۔ یہ فیصلہ ریٹیلرز کے احساس ایمرجنسی کیش کے امدادی رقوم کی ترسیل کے کام میں بہت بڑا محرک ثابت ہو گا اور وہ زیادہ بہتر و شفاف انداز میں اپنا کام سرانجام دیں سکیں گے۔

اے پی پی/ سعیدہ/قرۃالعین