اسلام آباد، جنوری   10 (اے پی پی ):   چائنہ پاکستان   اکنامک کاریڈور  کے تحت  تجارتی  اشیاء اور مال کی ملک کے طول و عرض میں نقل و حمل کے لیے  پاکستان ریلویز  کے زریعے  ایک سال میں 507 ملین روپے کی لاگت سے نوشہرہ میں اضاخیل ڈرائی پورٹ پایہ تکمیل کو   پہنچا    جس  کا افتتاح  آج  وزیراعظم عمران خان نے کیا ۔

مال برداری کی نقل و حمل یعنی لوڈنگ اور اَن لوڈنگ کی جدید سہولیات سے مزین    28 ایکڑ پر محیط  اضاخیل ڈرائی پورٹ  نوشہرہ شہر سے8کلو میٹر کی دوری پر مین جی ٹی روڈ پر واقع ہے  جسے   رنگ روڈ پشاورکے ساتھ براستہ سڑک رسائی بھی حاصل ہو گی۔

حکومت پاکستان کی لاجسٹکس کو فروغ دینے کی پالیسی کے مطابق اضا خیل ڈرائی پورٹ عوام اور تاجروں کی ضروریات کو پورا کرتے ہوئے قومی معیشت میں بھی  انتہائی   اہمیت کا حامل  ہے     جس  کے ذریعے کراچی بندرگاہ سے فریٹ کی ملک میں نقل و حمل اور پھر اس سامان کی افغانستان کو براستہ سڑک منتقلی کی جاسکے گی۔

 ا ضا خیل ڈرائی پورٹ اور سی پیک کے تحت پشاور سے کراچی تک 1872کلو میٹر طویل ریل ٹریک کے قیام سے پاکستان ریلویز مال برداری کے ضمن میں مارکیٹ کا 20فیصد شیئر حاصل کرنے کے قابل ہوجائے گا۔اس سے پاکستان ریلوے آنے والے پانچ چھ سالوں میں اپنے سالانہ خسارے پر قابو پانے میں کامیاب ہو جائے گا۔

ملک میں   تجارتی   سرگرمیوں کا فروغ   ملکی معیشت کی ترقی کے لیے   بنیادی  اہمیت کا حامل ہے  سی پیک کے تحت مواصلات کی بہتری اور  آسانی   کے لیے موجودہ حکومت کے  اقدامات  ملکی ترقی اور معیشت کے استحکام کی جانب ایک اہم ترین قدم ہے  ۔

وی این ایس