اسلام آباد، 03 ستمبر(اے پی پی ): جنگی جنون میں مبتلا بھارت نے کشمیریوں پر ظلم و بربریت کی انتہا کر ڈالی، کشمیریوں کا جینا مشکل کر دیا،جنت نظیر وادی میں انسانی حقوق کی پالی اپنی انتہا کو پہنچ گئی اور تو اور ایک ماہ سے جاری کرفیو نے  عوام کی بنیادی ضروریات تک رسائی تک چھین  لی ہے ۔

پاکستان نے کشمیریوں بھائیوں اور بہنوں کا ساتھ ہر سطح پر بھرپور انداز میں دیا، انکی آواز کو بین الاقوامی فورمز پر بھرپور انداز میں پہنچایا، یہ پاکستان کی ہی سفارتی کاوشوں کا نتیجہ ہے کہ اقوام متحدہ میں پہلی بار کشمیر کے ایجنڈا پر اجلاس بلایا گیا۔

پاکستان کی کوششوں سے کشمیریوں پر جاری مظالم دنیا بھر کے سامنے رکھے  گئے جس پر عالمی طاقتوں نے کشمیر کی صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا۔حال ہی میں یورپی یونین کے اجلاس میں بھی کشمیر ایشو کا زیر بحث آنا اسی سلسلے کی کڑی ہے، یورپی یونین نے کشمیر سے کرفیو اٹھانے کا مطالبہ کیا ہے۔ بھارت کشمیر میں نسل پرستی پر تلا ہوا ہے، اس   ہٹ دھرمی کے باوجود پاکستانی نے اپنی سفارتی کاوشوں کو جاری رکھا اور کارتارپور کوریڈور کھولنے کے اپنے فیصلہ   کو قائم  رکھا۔

وقت آگیا ہے کہ اقوام عالم، عالمی قوانین کی روح سے کشمیریوں کے حق خودارادیت کو تسلیم کریں اور ظلم و بربریت کا سلسلہ ختم کیا جائے۔

وی این ایس،  اسلام آباد