بورے والا،17 مئی (اے پی پی):لاک ڈاؤن میں نرمی کے بعد وہاڑی کے تین بولنے اورسننے کی صلاحیت سے محروم درزیوں  کا روزگار بھی بحال ہوگیا۔اپنی معذوری کو مجبوری نہ سمجھتے ہوئے یہ تین دوست دوسروں کے لئے مثال بن گئے ہیں  ۔

انسان اگر چاہیے تو اپنی کسی بھی معذوری کو اپنی مجبوری بنائے بغیر باعزت روزگار کے ساتھ زندگی گزار سکتا ہے۔ ایسی ہی ایک مثال وہاڑی کے رہائشی  بولنے اورسننے کی صلاحیت سے محروم ، تین درزی دوستوں کی ہے  جنہوں نے لاک ڈاؤن میں   بھی بے روزگاری کے باوجود کسی کے آگے ہاتھ نہیں پھیلایا اور لاک ڈاؤن میں نرمی کے بعد کپڑوں کی سلائی دوبارہ شروع کر کے باعزت روزگار کا سلسلہ شروع کردیا ۔

یہ پڑھے لکھے تین دوست کئی سالوں سے باعزت روزگار کما کر اپنے بچوں کا پیٹ پال رہے ہیں ۔سمارٹ فون  پر ویڈیو کال کے ذریعے اپنے گاہکوں سے رابطہ کر کے انکے کپڑوں کی سلائی کرنے میں مصروف ہیں جبکہ ان کے کام سے گاہگ بھی مطمئن دکھائی دیتے ہیں ۔اشاروں کی زبان سے گاہکوں کو سمجھاتے اور وڈیو کال پر اپنے گاہکوں سے رابطہ رکھتے یہ تینوں افراد بلاشبہ ان نوجوانون کے لیے مثال ہیں جو زندگی میں تمام سہولیات کےہوتے ہوئے بھی کام کرنے کو عار سمجھتے ہیں  اور یہ پیغام دیتے ہیں کہ اگر انسان کے پاس کوئی بھی ہنر موجود ہو تو انسان  باعزت روزگار کما سکتا ہے ۔

اے پی پی /اصغر علی جاوید/قرۃالعین