اسلام آباد، 03اگست(اے پی پی ):معیشت کی  ترقی اور بہتری کے  بغیر  کسی بھی ملک کی  ترقی اور  خوشحالی کا خواب  شرمندہ تعبیر نہیں   ہو سکتا  اسی  لیے موجودہ حکومت نے گزشتہ ایک سال کے دوران  ملک کی ترقی اور معیشت کے استحکام کو اولین ترجیحات میں شامل رکھا ہے۔

وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے اپنے پہلے سال میں معاشی عدم استحکام کے خاتمے، معیشت کی دستاویز بندی اور اقتصادی استحکام  کے لیے  موثر  اقدامات کئے جس  کے مثبت اثرات ہماری  معیشت کو  استحکام کی جانب لے جا رہے ہیں  ۔

اس  ایک سال کے دوران ایکسچینج ریٹ کی مارکیٹ کے تقاضوں اور حرکیات کے مطابق ایڈجسٹمنٹ  ، اخراجات پر قابو  ، غیر ضروری درآمدی اشیاءپر ڈیوٹیوں کی شرح میں اضافہ جبکہ توانائی کی قیمتوں کی حقیقی بنیادوں پر ایڈجسٹمنٹ کویقینی بنایا گیا جس کی وجہ سے ماضی کی حکومتوں کی اقتصادی بوجھ سے شدید متاثر ہونے والی معیشت کو پٹری پر ڈالنے میں مدد ملی۔

 مالیاتی خسارہ پر قابو پانے کیلئے حکومت ڈھانچہ جاتی اصلاحات پر توجہ دے رہی ہے جن  کا بنیادی مقصد محصولات اور اخراجات کے درمیان خلیج کو کم کرنا ہے۔   اس مقصد کیلئے ٹیکس کا منصفانہ نظام استوار کیا جا رہا ہے جبکہ محصولات میں اضافے پر بھی توجہ دی ہے۔ محصولات کے ضمن میں حکومت نے جو حکمت عملی مرتب کی ہے اس کے تحت وسیع البنیاد ٹیکس پالیسی اور انتظامی اصلاحات پر توجہ مرکوز کی گئی ہے جن کا مقصد جی ڈی پی کے تناسب سے ٹیکسوں کی شرح بڑھانا ہے۔

حکومت نے   چین پاکستان اقتصادی راہداری کے اگلے مرحلے کا آغاز کرتے ہوئے 9 خصوصی اقتصادی زونز میں سے تین اقتصادی زونزر    شکئی اقتصادی زون، دھابیجی اقتصادی زون، علامہ اقبال انڈسٹریل زون پر ترقیاتی کام کا آغاز کر دیا ہے۔

 سمندر پار مقیم پاکستانیوں کی وزیراعظم عمران خان پر اعتماد و یقین کی وجہ سے حکومت کے پہلے سال میں سمندر پار مقیم پاکستانیوں کی جانب سے ترسیلات زر میں ہدف سے زیادہ اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

انہی اقدامات کے نتیجےمیں   گزشتہ ایک  برس کے دوران  اقتصادی اعشاریوں کو بہتر  ی  ہوئی ، سرمایہ کار دوستانہ پالیسیوں کے ذریعے بالخصوص تیل و گیس کی تلاش کی سرگرمیوں میں نمایاں اضافہ دیکھنے میں آیا اور نوجوانوں کو ہنر مند بنانے اور روزگار کی فراہمی پر خصوصی توجہ مرکوز کی  جس کے باعث گزشتہ ایک سال کے دوران پورے ملک میں ترقیاتی سرگرمیوں کو تقویت  ملی  اور  روزگار کے نئے مواقع پیدا ہوئے جس کے نتیجے میں   ملکی  معیشت بہتری اور ترقی  کی راہ پر   گامزن ہوئی  اور آج ہم یہ امید کرتے ہیں  کہ پاکستان کا مستقبل انتہائی    روشن اور  ترقی  یافتہ ہو گا ۔

اے پی پی / سعیدہ/حامد