اسلام آباد،27مئی  (اے پی پی): وزیراعظم نے کہا کہ حضور اکرمﷺ نے ریاست مدینہ کی بنیاد پر دنیا کی عظیم ترین تہذیب قائم کی جس کے دو بنیادی اصول قانون کی حکمرانی اور فلاحی ریاست تھا، ہمارے پیغمبرﷺنے فرمایا تھا کہ ان کی صاحبزادی بھی اگر جرم کریں گی تو وہ سزا پائیں گی، دوسرا انہوں نے فرمایا کہ تم سے پہلے بہت سی اقوام اسی  لئے تباہ ہوئیں کیونکہ  انہوں نے طاقتورو امیر اور غریب اور کمزور لوگوں کیلئے الگ الگ قوانین بنا رکھے تھے۔ وزیراعظم نے کہا کہ جن اقوام میں قانون کی حکمرانی نہیں ہوتی اور وہاں جنگل کا قانون ہوتا ہے تو وہ جلد یا بدیر تباہ ہو جاتی ہیں جبکہ عظیم قومیں انصاف کے اصولوں پر عمل پیرا رہتی ہیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہمارے پیغمبرﷺنے انسانیت کی تاریخ میں فلاحی ریاست قائم کی اور پہلی مرتبہ ریاست نے غریبوں، یتیموں، بیوائوں اور کمزور طبقہ کی ذمہ داری قبول کی، پنشن کا نظام بھی خلیفہ دوئم حضرت عمر کے دور میں شروع ہوا اور ریاست نے بزرگ شہریوں کی امداد کی ذمہ داری لی، وہ ایک مثالی ریاست تھی، پہلے اس ریاست میں کمزور طبقہ کا خیال رکھا گیا اور دوسرے طاقتور لوگوں کو قانون کے تابع بنایا گیا، آج بھی ان عظیم اصولوں پر عمل کرنے والے معاشرے خوشحال ہیں جبکہ ایسے معاشرے جہاں قانون کی حکمرانی نہیں ہوتی اور کمزور طبقات کا خیال نہیں رکھا جاتا وہ تاریخ کا حصہ بن جاتے ہیں۔