اسلام آباد ۔ 25 فروری (اے پی پی)سرائیکی کے معروف شاعر جہانگیر مخلص نے کہا کہ ریاست کو مادری زبانوں کی سرپرستی کرنی چاہیے،یہ پی این سی اے اسلام آباد میں مادری زبانوں کے حوالے سے عالمی دن کے موقع پر اے پی پی سرائیکی سروس سے بات چیت کرتے ہوئے کہی ۔انہوں نے کہا کہ اسلام آباد میں مادری زبانوں کا میلہ ہونا ایک اہم پیشرفت اے،اس کے لیے ہم سب کو مادری زبانوں کی ترقی کے لیے مل کر کام کرنا ہے،بنیادی تعلیم بھی ماں بولی میں دی جانے چاہیے۔ہمارے بچوں کو علم ہی نہیں ہے کہ زبان کیا ہے اور ان کی ماں بولی کی اہمیت کیا ہے۔اسلام آباد میں ایک پنجابی پولیس افسر نے ایک خاتون سے پنجابی میں بات کی تو اس کو بہت بڑا مسئلہ بنادیا گیا۔یہ وہ وریے ہیں جو مادرزی زبان سے دوری کی وجہ سے ہیں۔ایسے منفی رویوں سے بچنے کے لیے مادری زبان کی اہمیت سمجھنی ہوگی۔انہوں نے کہا کہ ہمارے تعلیمی نظام میں ماءبولی کو لازمی کرنا ہوگا اور ماں بولی کا لٹریچر ان کی کتابوں اور انہیں محفوظ کرنے کے ساتھ ساتھ اس بارے میں پہچان کرانے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہاکہ آج کل ہر جگہ سے کتابیں چھپ رہی ہیں،عالمی ادب میں سرائیکی ادب اپنی جگہ بنا رہا ہے ،سرائیکی اتنی بڑی زبان ہے جو ملک کو ہر کونے میں بولی اور سمجھی جاتی ہے ،اور خوشی کی بات ہے کہ سرائیکی زبان میں عالمی معیار کو ادبی لٹریچر تخلیق ہو رہا ہے جس کے تراجم ہونے چاہییں۔

وی  این ایس،  اسلام آباد

Download Video