چاغی۔9جولائی(اے پی پی): سیندک کاپر اینڈ گولڈ پراجیکٹ میں آٹھ ماہ سے زائد عرصے کی بندش کے بعد خام مال کی باقاعدہ پیداوار کا عمل شروع کردیا گیا۔ جمعرات کو سیندک پراجیکٹ کی سمیلٹر کی دوبارہ فعالیت کے موقع پر ایم سی سی ریسورس ڈویلپمنٹ (پرائیویٹ) لمیٹڈ کے چیئرمین خوشوپنگ، صدر ژانگ ژیجن اور نائب صدر اسحاق شاہوانی کی موجودگی میں صدر ژانگ ژیجن و متعلقہ ملازمین سمیلٹر کی فرنس میں آگ جلاکر اسے فعال بنادیا۔ اس موقع پر کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے مرتب احتیاطی تدابیر پر عملدرآمد اور سماجی دوری کا خیال بھی رکھا گیا۔ سیندک پراجیکٹ میں عام طور پر سمیلٹر کا کام اکتوبر میں بند کرکے مارچ میں شروع کیا جاتا ہے۔ لیکن حالیہ عرصے میں کورونا وائرس کے باعث یہ تعطل طوالت اختیار کرگئی تاہم اب سیندک پراجیکٹ میں معمول کے تمام آپریشن دوبارہ سے شروع ہوچکے ہیں۔ اس موقع پر منعقدہ تقریب سے ایم آر ڈی ایل کے صدر خوشوپنگ نے خطاب کرتے ہوئے سیندک پراجیکٹ میں کام دوبارہ شروع کرنے میں معاونت کرنے پر پاکستان کی حکومت، متعلقہ اداروں اور سیندک پراجیکٹ کے تمام ملازمین کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ سمیلٹر کی بحالی سیندک پراجیکٹ کی بقاء کے لیے اہمیت رکھتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ کورونا وائرس کی خطرے کے باوجود پاکستانی اور چینی ملازمین نے سیندک پراجیکٹ میں ہر قسم کی مشکلات کا سامنا کرکے جانفشانی سے کام کیا۔ انہوں نے ملازمین کو یکجتی کا مظاہرہ کرتے ہوئے محفوظ پیداوار کو یقینی بنانے پر زور دیا اور امید ظاہر کی کہ اس سال ایم آر ڈی ایل پیداوار کا مقررہ حدف حاصل کرے گی۔ اس موقع پر پاکستانی اور چینی ملازمین نے “پاک چین دوستی زندہ باد” کے نعرے لگائے۔

 وی این ایس،چاغی