اسلام آباد ، 02 ستمبر (اے پی پی ): ماہ  محرم  کے آغاز   کے ساتھ ہی   ملک بھر میں   نواسہ رسول   حضرت امام  حسین  اور  شہداء  کربلا کی یاد میں   مجالس   او ر  عزا  داری  کا  آغاز    ہو  جاتا ہے۔ اس موقع پر   امن و   امان    کو یقینی بنانے کے لیے  پاکستان کے تمام چھوٹے بڑے شہروں    کے ساتھ ساتھ   وفاقی دارلحکومت  میں محرم الحرام کے حوالے سے سخت سیکیورٹی کے انتظامات اور ٹریفک پلان کو حتمی شکل دے د ی گئی  ہے  ۔

سکیورٹی پلان  کے مطابق  یکم محرم سے 2 ربیع الاول تک ضلع بھر میں 909 مجالس اور 177 جلوس ہوں گے جن  پر 12000 سے زائد پولیس افسران و جوان تعینات کئے گئے ہیں جبکہ  ڈ ی آئی جی آپریشنز تمام مجالس اور جلوسوں کی سکیورٹی کی خود نگرانی کریں گے ۔   اس کے علاوہ     جلوس کے راستوں     کے لیے متبادل   ٹریفک  پلان بھی جاری کر دیا گیا ہے  ۔

سیکیورٹی کو  یقینی بنانے کے تما م دستیاب وسائل اور جدید ٹیکنالوجی کو بروئے کار لاتے ہوئے حساس مجالس اور جلوسوں کو فول پروف سیکیورٹی فراہم کی جائے گی    جبکہ  عزاداروں کی سیکیورٹی کیلئے واک تھروگیٹس، میٹل ڈٹیکٹرزسے جامہ تلاشی ، سی سی ٹی وی مانیٹرنگ اور ویڈیو ریکارڈنگ بھی  کی جائے گی ۔

حساس جلوسوں اور مجالس کے روٹ پر آنے والی عمارتوں کی چھتوں پر سنائیپرز اور عزاداروں کی سیکیورٹی کیلئے مجالس اور جلوسوں میں سادہ کپڑوں میں کمانڈوز کو بھی تعینات کیا جا رہا ہے     تا   کہ عوام کی   حفاظت کو یقینی بنا  کر   کسی  بھی ناخوشگوار  واقع   سے بچا جا سکے  ۔

وی این ایس ، اسلام آباد