ٹنڈو آدم      ،26 فروری(اے پی پی ):سندھ کے صوفی بزرگ  حضرت شاہ عبدالطیف بھٹائی  کے مزار   کی     پشت  پر واقع مشہور ثقافتی  و سیاحتی   شہر  ٹنڈو آدم      کے     قدیم علاقے  جمن شاہ جتی کا ایک ہی خاندان پچھلی سات  پشتوں   یعنی  تقریبا 200 سال سے پکی ہوئی ران   یعنی  (سجی)  کے    کاروبار  سے وابستہ  ہے             ۔

ٹنڈو آدم کی بکری   کی  سجی  اپنے مخصوص ذائقے کی وجہ  سے  نہ صرف  پاکستان بلکہ  دنیا کے  بیشتر ممالک میں  اپنی الگ  پہچان  رکھتی ہے         اور اسکے  ذئقے اور لذت  کے حصول کے  لئے     دنیا  بھر سے   لوگ  اس شہر کا   رخ  کرتے ہیں جب کہ سندھ  اور ملک  کے دیگر  علاقوں میں  مشہور سیاسی  و سماجی شخصیات کی اہم تقاریب  کی  زینت  بھی  اس سجی کو  کھانے میں پیش کرکے بڑھائی جاتی ہے ۔

سجی                    کی تیاری      میں  سب  سے اہم مرحلہ  بکرے کا درست  انتخاب    ہے،  اس کے بعد   پکانے کے عمل میں مصالحہ  جات کی درست مقدار سے لے کر       آگ   کی حد       طے کرنا ہے،          اس کی تیاری کا عمل کافی مشکل مگر دلچسپ  ہے   مختلف مرا حل   اور  دیگر اوقات میں الگ الگ مصالحوں   کے   انتخاب         تک   سجی  کی    تیاری میں     تقریباََ  َ       5 سے 7 گھنٹے لگتے ہیں                   ،  سجی  کی   تیاری میں جلد بازی  سے کام لیاجائے تو اس کے ذائقے میں کمی آجاتی ہے

  بکرے  کے گوشت  سے  تیار کردہ   سجی  صوبہ سندھ خاص  طور پر  ٹنڈو آدم کی پہچان ہے۔

 وی  این ایس،  حیدر آباد