چترال،17 جون(اے پی پی): 8 جولائی 2019 کو گلوف  حادثے کی وجہ سے تباہ  ہونے   والے گولین واٹر سپلائی سکیم کی   بحالی  کا  افتتاح  کر دیا  گیا ہے ، واٹر سپلائی سکیم سے  چترال ٹاؤن کے چالیس ہزار آبادی کو   پینے  کا صا ف  پانی  مل  سکے گا ، وزیر اعلیٰ کے مشیر برائے اقلیتی امور وزیر زادہ کیلاش نے بحالی منصوبے کا افتتاح کیا۔

اس موقع پر   بریفنگ  دیتے  ہوئے  محکمہ پبلک ہیلتھ انجینئرنگ  چترال کے ایگزیکٹیو انجینئر زاہد حسین نے کہا کہ اس منصوبے کیلئے صوبائی حکومت نے ساڑھے چھ کروڑ سے زیادہ  کی رقم منظور کی  ہے اور ہماری کوشش ہوگی کہ یہ  منصوبہ جلد  سے  جلد  مکمل  ہو ،تاہم  کام کے  معیار کا  بھی   پورا پورا  خیال رکھا جائے  گا ۔

تعمیراتی کمپنی کے چیف ایگزیکٹو حاجی محبوب اعظم نے کہا  کہ ہم قدرتی آفات کو تو نہیں روک سکتے تاہم اس کی نقصان کا شرح کم سے کم کیا جاسکتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ اس بار  ہماری کوشش ہوگی کہ اس  پائپ لائن کو ایسے محفوظ راستے سے گزارا جائے تاکہ سیلاب کی وجہ سے اسے کم سے کم نقصان پہنچے یا بالکل محفوظ رہے۔

واضح رہے کہ  8 جولائی 2019 کو آنے  والے   سیلاب  نہ صرف پانی گولین واٹر سپلائی سکیم  کا  پائپ لائن بہاکر لے گیا تھا بلکہ 107 میگا واٹ پن بجلی گھر کا پانی کا تالاب بھی تباہ ہوا تھا اور آبپاشی  کیلئے  نصب پائپ لائن بھی  مکمل  طور پر تباہ ہو گئی تھی۔

 وی این ایس ، چترال