کراچی (اے پی پی ): 9 نومبر ،فروغِ اقبالیات فورم،ڈائریکٹوریٹ آف الیکٹرانک میڈیا اینڈ پبلیکیشنزمنسٹری آف انفارمیشن اینڈبراڈکاسٹنگ اور آفس آف ریسرچ اینوویشن اینڈ کمرشلائزیشن جامعہ کراچی کے اشتراک سے یوم اقبال کے موقع پر پروگرام بعنوان: یقین محکم،عمل پیہم،محبت فاتح عالم کی افتتاحی تقریب بروز پیر09 نومبر2020 کو صبح10:00 بجے جامعہ کراچی کے کلیہ فنون وسماجی علوم کی سماعت گاہ میں منعقد ہوئی ۔تقریب کے مہمان خصوصی معروف تعلیمی شخصیت عبدالمجید صاحب تھے۔ خطبہ استقبالیہ پروفیسر ڈاکٹر عالیہ رحمان نے پیش کیا شیخ الجامعہ پروفیسر ڈاکٹر خالد محمود عراقی نے صدارت کے فرائض انجام دیے وائس چانسلر جامعہ کراچی خالد محمود عراقی نے اپنے خطاب میں کہا کہ آج کہ یہ تقریب شاعر مشرق کے افکار کو اجاگر کرنے میں مدد دے گی اقبال کی شاعری ہمیں یہ سکھاتی ہے کہ ہم تب تک ترقی نہیں کر سکتے جب تک ہمارا ظاہر اور باطن یکساں نہ ہو ہم انصاف پر مبنی معاشرے کی تشکیل نہیں کرتے اگر ہم اصلاح کے عمل کو مکمل کرتے رہیں تو بہترین فلاحی ریاست کا تصور سامنے آ جائے گا ، ڈائریکٹوریٹ آف الیکٹرانک میڈیا اینڈ پبلیکیشنز فیڈرل منسٹری آف انفارمیشن اینڈبراڈکاسٹنگ کی ڈائریکٹر ارم تنویر نے اپنے خطاب میں کہا کہ اقبال ڈے پر ہم نے یقین محکم عمل پیہم محبت فاتح عالم کو موضوع رکھا ہے یہ مصرعہ واضح پیغام دیتا نظر آتا ہے کہ نوجوانوں کو اپنی منزل تک رسائی کے لیے عملی زندگی کی طرف آنا ہو گا محض خیالی باتیں کرنے سے کچھ نہیں ہو گا۔ موجودہ وزیر اعظم عمران خان صاحب اقبال کے فلسفہ خودی کا جیتا جاگتا ثبوت ہیں وہ نوجوانوں کو اسی کی تلقین کرتے ہیں نوجوان ان سے متاثر ہوتے ہیں پاکستان کے وجود کو سمجھنے کے لیے اقبال کو سمجھنا بہت ضروری ہے امت مسلمہ کا جو ت تصور ہے وہ برصغیر کے مسلمانوں کو اقبال کی شاعری سے ملا تھا آج عالمی سطح پر مسلمانوں کی جو حالت ہے وہ اسی لیے ہے کہ ہم نے اپنے آپ کو بطور قوم مضبوط نہیں کیا اگر ہم تعلیمات اقبال کی روح کو سمجھ لیں تو دنیا کی کوئی سازش ہمیں ناکام نہیں کر سکتی ہے ، تقریب کے دیگر مقررین میں لاہور سے اسلم کمال،حمید تنولی،عمر الغزالی،ڈاکٹر محمد عارف صدیق اور نوابشاہ سے پروفیسر محمد یوسف شیخ شامل تھے ۔اس موقع پر یوم اقبال کی مناسبت سے نمائش کا بھی اہتمام کیا گیا تھا جسے شرکا نے بڑی دلچسپی سے دیکھا اور سراہا نمائش کا افتتاح معروف خطاط اسلم کمال نے کیا ۔