زیارت،1جون  (اے پی پی):وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ہم نے اتحادی حکومت ہونے کے باوجود بلوچستان کو نمایاں فنڈز دیئے، 700 ارب روپے کا پیکیج دیا جبکہ اب سڑکوں کا پیکیج دے رہے ہیں، زیارت میں ایل این جی پلانٹ کیلئے آئندہ مالی سال میں بھرپور کوشش کریں گے، زیارت سیاحت کا مرکز بن سکتا ہے۔

 وہ منگل کو قائداعظم ریذیڈنسی زیارت میں تقریب سے خطاب کر رہے تھے۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہم نے بلوچستان کو اپنا سمجھا، پہلی حکومتوں نے بلوچستان کو دیا نہیں بلکہ اس سے لیا، ہماری حکومت نے مشکل حالات کے دوران جب گذشتہ حکومتوں کے بھاری قرضے بھی واپس کرنے تھے اس کے باوجود جتنا ہو سکا بلوچستان کیلئے فنڈز دیئے ہیں، بلوچستان پر ماضی میں توجہ نہیں دی گئی، پیسہ خرچ نہیں کیا گیا، جو پیسہ دیا گیا اگر وہی صحیح خرچ ہوتا تو بلوچستان کی تقدیر بدل جاتی۔

وزیراعظم نے کہا کہ زیارت سیاحت کا مرکز بن سکتا ہے، اس سے مقامی لوگوں کو آمدن حاصل ہوگی، روزگار میں اضافہ اور غربت میں کمی آئے گی، خیبرپختونخوا میں جب ہماری حکومت آئی تو وہاں دہشت گردی تھی، کاروبار بند تھے، اغواء برائے تاوان بڑا کاروبار بن چکا تھا، لوگ پشاور چھوڑ کر اسلام آباد میں آباد ہو رہے تھے، یو این ڈی پی کی رپورٹ کے مطابق 2013ء سے 2018ء تک خیبرپختونخوا میں غربت تیزی سے کم ہوئی، امیر غریب کا فرق کم ہوا، انسانوں پر سب سے زیادہ خرچ ہوا، اس کی بڑی وجہ سیاحت کو فروغ دینا تھا اس سے روزگار کے مواقع اور کاروبار بڑھے، آدھی آبادی کو اس دور میں جبکہ باقی کو اب صحت کارڈ دیئے گئے، یہ صحت کارڈ نہیں بلکہ ہیلتھ انشورنس ہے، جلد پورے پنجاب کے پاس بھی یہ صحت کارڈ ہو گا، اس سے دیہی علاقوں کے اندر بھی صحت کی بہترین سہولیات میسر آئیں گی، ہسپتالوں کا جال بچھے گا، نجی شعبہ دیہی علاقوں میں ہسپتال بنانے کیلئے آگے آئے گا۔

 انہوں نے وزیراعلیٰ بلوچستان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اگر اپنے لوگوں کی اصل خدمت کرنی ہے تو بلوچستان میں ہر خاندان کو صحت کارڈ کی سہولت دی جائے، غریب گھرانوں کی اس سے زیادہ کوئی خدمت نہیں ہو سکتی۔ وزیراعظم نے کہا کہ زیارت میں شدید سردی اور سرد ہوائیں چلتی ہیں، یہاں پر گیس پائپ لائن کی بجائے ایل پی جی کا پلانٹ لگانا زیادہ قابل عمل ہے، اس کی فزیبلٹی پر بات کروں گا، پوری کوشش کریں گے کہ آئندہ مالی سال میں اس پر کام شروع کر دیں۔