اسلام آباد،11جون  (اے پی پی):آئندہ مالی سال 2021-22ءکا 8487 ارب روپے حجم کا وفاقی بجٹ قومی اسمبلی میں پیش کردیا گیا ہے  ۔ اس   بجٹ  سیزن کے آ غاز   یعنی  قومی اقتصادی سروے 2020-21 کے اجرا سے لیکر  وفاقی بجٹ کو   قومی اسمبلی میں پیش کرنے  تک  بجٹ   کے   چیدہ  چیدہ  نکات کو   عوام  کے سامنے  لانے    اور   بجٹ   کو  آسا ن   الفاظ میں  بیان کر  کے  ایک   خبری صورت  دینے  میں  قومی   خبر رساں  ایجنسی   ایسوسیٹڈ پریس  آف پاکستان  کا  کلیدی  کردار ہے  ۔ بحیثیت ایک  قومی    ادارہ ایسوسیٹڈ پریس  آف پاکستان   مستند   نیوز کو  ایک      طے شدہ  معیاری     طریقہ کار  کے  تحت  دوسرے  خبری   اداروں   اور   بذریعہ  سوشل میڈیا عوام   تک  پہنچاتا ہے  ۔

عام  آدمی کو کتنا اور کس طرح کا  ریلیف  دیا    گیا ہے ، سرکاری  ملازمین  کی تنخواہوں اور پنشنروں کی پنشن میں  کتنا  اضافہ ہوا  ہے ، احساس  پرو گرام  کیلئے نئے مالی سال  میں  کتنی رقم  رکھی   گئی  ہے ، کامیاب پاکستان پروگرام کے تحت کم آمدن ہاؤسنگ کی مدمیں    کتنا قرضہ   دیا جائے  گا ،کاشتکاروں کو کیا  سہولیات  دی  گئی ہیں ،زراعت کے شعبے  کی ترقی کیلئے  کیا  منصوبہ ہے ، ودہولڈنگ ٹیکس کی  شرح میں  کتنی کمی کی جا رہی ،کم آمدن افراد پر مہنگائی کے دباﺅ کو کم کرنے کے لئے کم سے کم اجرت کتنی رکھی  گئی  ہے  ،  یہ اور اسطرح کے  کئی  سوالات  ہوتے  جو   عوام  بجٹ  پیش ہونے  کے   بعد   جانا چاہتی   ہے ، ایسوسیٹڈ پریس  آف پاکستان    بجٹ   میں پیش  کیے   گئے  ہر سیکٹر کی  الگ الگ خبر نگاری کر  کے اسے   عوام  تک  پہنچاتی   ہے ۔

ہر مالی  سال  کے بجٹ   کی  طرح  بجٹ  2021-22 کو  بھی     قومی   خبر رساں  ایجنسی   ایسوسیٹڈ پریس  آف پاکستان نے   علاقائی ،  قومی   اور  عالمی  زبانوں  میں    بہترین انداز میں پیش کیا  اور  بجٹ کی  مکمل  تفصیلات  سے   عوام  کو آگاہ کیا ۔